Digital Forensic, Research and Analytics Center

بدھ, نومبر 30, 2022
spot_imgspot_imgspot_imgspot_img

Popular Posts

Latest

فیکٹ چیک: کیا کشمیر میں تین لاکھ کشمیری ہندوؤں کا قتل عام؟ اشوک پنڈت نے کیا فیک دعویٰ

گوا میں جاری انٹرنیشنل فلم فیسٹیول آف انڈیا (IFFI)...

فیکٹ چیک: ڈونلڈ ٹرمپ کے پوسٹ کا فیک اسکرین شاٹ وائرل

ڈونلڈ ٹرمپ کے پوسٹ کا ایک اسکرین شاٹ سوشل...

آن لائن اسکین الرٹ: قطر نہیں دے رہا 50GB فری ڈیٹا- پڑھیں فیکٹ چیک

سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ شیئر کرکے دعویٰ کیا...

فیکٹ چیک: ’36 ٹکڑےکرنے‘ کا بیان دینے والا راشد خان نہیں، وکاس کمار ہے

شردھا واکر کو اس کے پارٹنر آفتاب پونہ والا...

فیکٹ چیک: ’آج تک‘ نے پھیلائی حیدرآباد کی مسجد میں کیمیکل دھماکے کی جھوٹی خبر

نیوز چینل ’آج تک‘ کا ایک ٹویٹ سوشل میڈیا سائٹس پر وائرل ہو رہا ہے۔ اس ٹویٹ میں دیکھا جا سکتا ہے کہ حیدرآباد کے گَولی گوڈہ  گول کی ایک مسجد میں کیمیکل دھماکے کی خبر ہے۔ یہ بھی دعویٰ کیا گیا ہے کہ اس بلاسٹ میں دو افراد زخمی ہو گئے۔

پورنیما بسواس نامی یوزر نے ’آج تک‘ کے اس ٹویٹ اسکرین شاٹ کو شیئر کرتے ہوئے لکھا،’ اسلامی بم سائنسداں کام پر تھے اور پھر کیمیکل بم پھٹ گیا! اولا- اوبر‘۔(اردو ترجمہ)

Facebook Screenshot

ایک دیگر یوزر، وکاس چودھری نے بھی ہنگلش میں کیپشن،’ Baulana Chemestry Practical kar raha tha Basjid me‘ کے ساتھ یہی ٹویٹ اسکرین شاٹ شیئر کیا ہے۔

Facebook Screenshot

وہیں، دی اسپیکر نامی ٹویٹر یوزر نے کیپشن ،’مسجد میں کیمیکل کا کیا کام ؟ اتنا کیمیکل کہ اس میں بلاسٹ ہو جائے، کیوں اکٹھا کیا گیا تھا؟ کیسا کیمیکل تھا جس میں بلاسٹ ہو جائے؟ کے ساتھ وہی اسکرین شاٹ، شیئر کیا ہے۔

Tweet Screenshot

فیکٹ چیک:

آج تک کی  وائرل ہورہی اسکرین شاٹ کی جانچ پڑتال کے لیے ہم نے سب سے پہلے، آج تک کا ٹویٹر اکاؤنٹ کھنگالا ۔ اس دوران ہمیں آج تک کے ٹویٹر پر یہ ٹویٹ ملا، جس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ مسجد میں کیمیکل بلاسٹ ہوا ہے۔ اس ٹویٹ کے ساتھ ویب سائٹ پرپبلش ایک خبر کا لنک بھی پوسٹ کیا گیا ہے۔

Aaj Tak Tweet Screenshot

اس نیوز کے لنک کو اوپن کرنے پر واقعہ کے تناظر میں رپورٹ پڑھی جا سکتی ہے۔ حالانکہ رپورٹ میں کہیں بھی مسجد کے اندر کیمیکل بلاسٹ ہونے کی اطلاع نہیں دی گئی ہے۔

وہیں اس واقعہ کو دی نیو انڈین ایکسپریس، دی نیوز منٹ سمیت دیگر میڈیا ہاؤسز نے کور کیا ہے، جن کے مطابق کیمیکل دھماکہ مسجد کے اندر نہیں ہوا ہے۔

ان رپورٹس کے مطابق،’حیدرآباد میں افضل گنج کے مہاراج گنج علاقے کی موگرام بستی میں 12 جون کی صبح تقریباً 10 بجے دھماکہ  ہوا اور کیمیکل تاجر بھرت بھٹّر کی موقع پر ہی موت ہو گئی۔

پولیس نے بتایا کہ بھٹر اپنی دکان کے سامنے نالے میں ایکسپائرڈ کیمیکل پھینک دیتا تھا جس کی وجہ سے اس دن بلاسٹ  ہوا۔

نتیجہ:

DFRAC  کے اس فیکٹ چیک سے واضح ہے کہ آج تک کی جانب سے کیا گیا ٹویٹ فرضی ہے۔ آج تک نے کیمیکل بلاسٹ  کے واقعے کو فرقہ وارانہ اینگل دیتے ہوئے مسجد سے جوڑ دیا ، جبکہ کیمیکل دھماکہ حیدرآباد کی کسی مسجد میں نہیں ہوا، اس لیے آج تک اور سوشل میڈیا یوزرس کی جانب سے جو دعویٰ کیا جا رہا ہے وہ غلط اور فرضی ہے۔

دعویٰ: حیدرآباد کی مسجد میں کیمیکل دھماکہ

دعویٰ کنندگان: آج تک اور دیگر سوشل میڈیا یوزرس

فیکٹ چیک: فرضی

(آپ DFRAC# کو ٹویٹر، فیس بک اور یوٹیوب پر فالو کر سکتے ہیں۔)