Digital Forensic, Research and Analytics Center

بدھ, نومبر 30, 2022
spot_imgspot_imgspot_imgspot_img

Popular Posts

Latest

فیکٹ چیک: کیا کشمیر میں تین لاکھ کشمیری ہندوؤں کا قتل عام؟ اشوک پنڈت نے کیا فیک دعویٰ

گوا میں جاری انٹرنیشنل فلم فیسٹیول آف انڈیا (IFFI)...

فیکٹ چیک: ڈونلڈ ٹرمپ کے پوسٹ کا فیک اسکرین شاٹ وائرل

ڈونلڈ ٹرمپ کے پوسٹ کا ایک اسکرین شاٹ سوشل...

آن لائن اسکین الرٹ: قطر نہیں دے رہا 50GB فری ڈیٹا- پڑھیں فیکٹ چیک

سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ شیئر کرکے دعویٰ کیا...

فیکٹ چیک: ’36 ٹکڑےکرنے‘ کا بیان دینے والا راشد خان نہیں، وکاس کمار ہے

شردھا واکر کو اس کے پارٹنر آفتاب پونہ والا...

فیکٹ چیک: NIA نے جاری نہیں کیا ہیلپ لائن نمبر ، سوشل میڈیا پر گمراہ کن دعویٰ وائرل

سوشل میڈیا پر اکثر گمراہ کن خبریں وائرل ہوتی رہتی ہیں۔ ہندوستان کی کلیدی تفتیش کار ایجنسی NIA  (نیشنل انویسٹی گیشن ایجنسی) کے بارے میں ایک پوسٹ وائرل ہو رہا ہے۔ اس پوسٹ میں لکھا گیاہے کہ این آئی اے نے ہیلپ لائن نمبر جاری کیا ہے۔ اگر کوئی قابل اعتراض نعرے لگاتا ہے تو ان نمبروں پر کال کر کے اس کی شکایت کی جا سکتی ہے۔ اس پوسٹ میں موبائل نمبر، لینڈ لائن نمبر اور ای میل آئی ڈی دی گئی ہے۔

ایک یوزر نے اس پوسٹ کو شیئر کرتے ہوئے لکھا ،’این آئی اے نے جاری کیا نمبر ۔ سوشل میڈیا یعنی فیس بک، ٹویٹر  اور واٹس اپ پر دہشت گردانہ دھمکی کی رپورٹ کرنے کے لیے ایک خصوصی نمبر۔ جوکوئی’سر تن سے جدا‘  کا نعرہ لگاتا نظر آ جائے، فیس بک پر کمنٹ میں یا ٹویٹر پر کہیں بھی، یاآپ کو دھمکی دے، براہ راست اس کا اسکرین شاٹ لیں، لنک کاپی کریں اور اس نمبر پر کال کریں۔ پھر آپ کو ایک افسر کا میل دیا جائے گا، جہاں آپ کو سب بھیجنا ہے۔ 011-24368800‘۔

وہیں کئی دیگر یوزرس نے بھی اس پوسٹ کو شیئر کیا ہے۔

فیکٹ چیک:

وائرل ہو رہے دعوے کی جانچ- پڑتال کرنے کے لیے، ہم نے گوگل پر سمپل سرچ کیا۔ ہمیں 17 ستمبر 2021 کو نیوز ایجنسی  ANI کا ایک ٹویٹ ملا۔ اس ٹویٹ کے مطابق این آئی اے کی جانب سے ہیلپ لائن نمبر جاری کیا گیا تھا تاکہ سوشل میڈیا پر کسی بھی یوزر کی جانب سے  دہشت گرد تنظیم آئی ایس آئی ایس یا نوجوانوں کو انتہا پسند بنانے کی روک تھام کے لیے جاری کیا گیا تھا۔

 وہیں اس تناظر میں NIA کی ویب سائٹ پر ہمیں ایک پریس ریلیز ملی، جس میں یہ وضاحت کی گئی ہے کہ این آئی اے نے ایسا کوئی پیغام جاری نہیں کیا ہے۔ NIA نے اس پیغام کو گمراہ کن قرار دیا ہے۔

نتیجہ:

ہمارے فیکٹ چیک سے ثابت ہوتا ہے کہ این آئی اے (NIA) نے ایسا کوئی پیغام جاری نہیں کیا ہے،لہٰذا سوشل میڈیایوزرس کی جانب سے کیا جا نے والا  دعویٰ گمراہ کن ہے۔

دعویٰ: این آئی آے (NIA ) نے جاری کیا متنازعہ نعروں کے لیے ہیلپ لائن نمبر

دعویٰ کنندہ: سوشل میڈیا یوزرس

فیکٹ چیک: گمراہ کن

(آپ DFRAC# کو ٹویٹر، فیس بک اور یوٹیوب پر فالو کر سکتے ہیں۔)